قسمت میں ساحلوں کے وہ گہرائیاں کہاں
جوبحر کو نصیب وہ پہنائیاں کہاں

ہجومِ آدمی کا نام شہر پڑ گیا
لیکن وہ شہرِدل کی بزم آرائیاں کہاں

ہر ایک کو ہے فخر فنِ گفتگو پہ آج
لیکن وہ سادہ لہجوں کی سچائیاں کہاں

لوگوں کے بیچ میں بھی ہر ایک شخص ہے تنہا
وہ پُر سکون لمحوں کی تنہائیاں کہاں

عمارتیں تو ساری فلک بوس ہو گئیں
تعمیرِ آدمی کی وہ اونچائیاں کہاں

1,626
PoorFairGoodVery GoodExcellent Votes: 18
Loading...